Rekhta.org Largest Collection of Urdu Poetry on Web

 
Posted by:Zeshan

Ashaar mire yun to zamane ke liye hain
Kuchh sher faqat un ko

rekhta
===

Imtidaad-e-sahar-o-shaam zamaanon ki qasam
Ek bhi rang mere pyaar ka phika na hua

==

en_sitaaron-se-aage-jahaan-aur-bhii-hain-allama-iqbal-ghazals

en_sunaa-hai-log-use-aankh-bhar-ke-dekhte-hain-ahmad-faraz-ghazals

en_vo-jo-ham-men-tum-men-qaraar-thaa-tumhen-yaad-ho-ki-na-yaad-ho-momin-khan-momin-ghazals

Advertisements
en_ye-aarzuu-thii-tujhe-gul-ke-ruu-ba-ruu-karte-aatish-haider-ali-ghazals

-==

Ab K Mujh Ko Dekh Kar Woh Dekhta Reh Jaye Ga”

“is Qadar Badlien Ge Hum Woh Sochta Reh Jaye Ga”

“Mere Chehre Par bhi Honge
… Be-Rukhi K Zaawiye”

“Aisa Hai K Mujh Mein Mujh Ko Dhoondta Reh Jaye Ga”

“Us Ki Gali Se Ab Kabhi Mera Guzar Mumkin Nahi”

“Woh Apne Ghar Ki Khirkiyoon Se Jhankta Reh Jaye Ga”

“Kyun Aansuon Ki Dhool Mein Main Zindagi Ko Jhonk Doon”

“Dil Ka Kya Hai
Toot’ta Hai
Toot’ta hi Reh Jaye Ga….!

==

تعلق بعد میں تبدیل ہو کر کچھ بھی رہ جاۓ
محبت سے وہ پہلا مسکرانا یاد رہتا ہے

کسی کی لاکھ باتیں ایک پل میں بھول جاتی ہیں
کسی کا ایک بھی جملہ پرانا یاد رھتا ھے

==

کہیں رْوپ رْوپ دیۓ بْجھے کہیں زْلف سایہ بچھا لیا
بڑی تیرگی تھی ترے نگر سو میں اپنا گھر ہی جلا لیا

مرے حرف حرف تھے آۂینے کہ جو عکس آیا ٹھر گیا
مری چشمِ خواب کے معجزے اْسے رتجگوں میں جگا لیا

مری زندگی بھی عجیب تھی ، مری موت مجھ سے قریب تھی
مرے چارہ گر بڑی دْور تھے سو میں اپنا لاشہ اْٹھا لیا

کبھی مے و مینا میں گْم رہا کبھی ذات نشے میں خْم رہا
مری عمرِ ہجر طویل تھی اسے جاگتے میں سْلا لیا

یہی بام و در کبھی خواب تھے یہی بام و در کہ عذاب تھے
وہ جو میرے گھر میں بسا نہیں اسے چشمِ تر میں بسا لیا

تری کاۂناتوں کے درمیاں کئ رْوپ رنگ تھے ضوْ فشاں
جسے چاہا خود سے جدا کیا جسے چاہا خود میں ملا لیا

کوئ لب ہلے تو دیۓ جلے جو نوید صبحِ وصال تھے
کوئ نور جی میں بکھر گیا کسی تیرگی کو بجھا لیا

مرے ہم نفس مری زندگی ترے بن تو جاں سے گزر چلی
کبھی یوں لگے کہ جْدا ہے تْو کبھی یوں لگے تجھے پا لیا

===

ہمیں اب کھو کے کہتا ہے مجھے تم یاد۔آتے ہو
کسی کا ہو کے کہتا ہے مجھے تم یادآتے ہو
سمندر تھا تو زوروشور سے لہریں بہاتا تھا
اب قطرہ ہو کے کہتا ہے مجھے تم یادآتے ہو
بیاں کرتے جو حال دل تو یوں مسکرا دیتے
اب وہی رو کے کہتا ہے مجھے تم یاد آتے ہو۔
نہ پوچھ اس کی بد نصیبی کا عالم رحیم
وہ مجھ کو کھو کے کہتا ہے مجھے تم یاد آتے ہو

Advertisement