Jab Bhi Laai Gardish-e-Ayyam Tere Shehar Main by Qateel Shifai

 
Posted by:Zeshan


شاعر: Qateel Shifai

جب بھی لائی گردشِ ایام تیرے شہر میں
ہم پر آیا اک نیا الزام تیرے شہر میں
اِک ذرا سی بات کیا پھیلی کہ افسانہ بنی
ہوگئے ہم مفت میں بدنام تیرے شہر میں
غیر تو پھر غیر ہیں اپنے بھی ناصح بن گئے
جب لیا بھولے سے تیرا نام تیرے شہر میں
کیوں نہ ہم بھی دُور کر لیں زندگی بھر کی تھکن
خیمہ زن ہے گیسوؤں کی شام تیرے شہر میں
لوگ تو آغاز ہی میں دُشمنِ جاں ہو گئے
جانے اب کیا ہو مرا انجام تیرے شہر میں

Jab Bhi Laai Gardish-e-Ayyam Tere Shehar Main
Ham Par Aaya Ek Naya ilzaam Tere Shehar Main
Ek Zara Si Baat Kaya Phaili Kah Afsana Bani
Ho Gaye Ham Muft Main Badnaam Tere Shehar Main
Ghair to Phir Ghair Hain Apnay Bhi Naasih Ban Gaye
Jab Liya Bhoolay Say Tera Naam Tere Shehar Main
Kuin Nah Ham Bhi Dorr Kar Lain Zinadagi Bhar Ki Thakan
Khaima Zan Hay Gaisdoun Ki Shaam Tere Shehar Main
Log To Aghaazm Hi Main Dushman-e-Jaan Ho Gaye
Janay Ab Kaya Ho Mera Anjaam Tere Shehar Main

Advertisement