Ajab Hai Rang E Chaman Ja Ba Ja Udaasi Hai

 
Posted by:Zeshan

عجب ہے رنگ ِ چمن، جا بجا اُداسی ہے
مہک اُداسی ہے، باد ِ صبا اُداسی ہے
نہیں نہیں، یہ بھلا کس نے کہہ دیا تم سے؟
میں ٹھیک ٹھاک ہوں، ہاں بس ذرا اُداسی ہے
میں مبتلا کبھی ہوتا نہیں اُداسی میں
میں وہ ہوں جس میں کہ خود مبتلا اُداسی ہے
طبیب نے کوئی تفصیل تو بتائی نہیں
بہت جو پوچھا تو اتنا کہا، اُداسی ہے
گداز ِ قلب خوشی سے بھلا کسی کو ملا؟
عظیم وصف ہی انسان کا اداسی ہے
شدید درد کی رو ہے رواں رگ ِ جاں میں
بلا کا رنج ہے، بے انتہا اُداسی ہے
فراق میں بھی اُداسی بڑے کمال کی تھی
پس ِ وصال تو اُس سے سِوا اداسی ہے
تمہیں ملے جو خزانے، تمہیں مبارک ہوں
مری کمائی تو یہ بے بہا اُداسی ہے
چھپا رہی ہو مگر چھپ نہیں رہی مری جاں
جھلک رہی ہے جو زیر ِ قبا اُداسی ہے
دماغ مجھ کو کہاں کائناتی مسئلوں کا
مرا تو سب سے بڑا مسئلہ اُداسی ہے
فلک ہے سر پہ اُداسی کی طرح پھیلا ہُوا
زمیں نہیں ہے مرے زیر ِ پا، اُداسی ہے
غزل کے بھیس میں آئی ہے آج محرم ِ درد
سخن کی اوڑھے ہوئے ہے ردا، اُداسی ہے
عجیب طرح کی حالت ہے میری بے احوال
عجیب طرح کی بے ماجرا اُداسی ہے
وہ کیف ِ ہجر میں اب غالباً شریک نہیں
کئی دنوں سے بہت بے مزا اُداسی ہے
وہ کہہ رہے تھے کہ شاعر غضب کا ہے عرفان
ہر ایک شعر میں کیا غم ہے، کیا اُداسی ہے
Ajab hai rang e chaman, jaa-ba-ja udaasi hai
Mahek udaasi hai, baad-e-sabaa udaasi hai
Nahi nahi yeh bhala kis ne kah diya tumse
MaiN thik thak hun, haaN bus zara udaasi hai
MaiN mubtila kabhi hota nahi udaasi mein
MaiN wo hun jis mein K khud mubtila udaasi hai
Tabeeb ne koi tafseel to bataayi nahi
Bahut jo poochhha to itna kaha udaasi hai
Gudaaz Qalb khushi se bhala kisi ko mila?
Azeem wasf hi insaan ka udaasi hai
Shadeed dard ki rau hai ravaaN rag-e-jaaN mein
Bala ka ranj hai be inteha udaasi hai
Firaaq mein bhi udaasi baRe kamaal ki thi
Pas-e-visaal to us se siwaa udaasi hai
TumheN mile jo khazaane tumhein mubrak hoN
Meri kamaayi to yeh be-bahaa udaasi hai
Chhupa rahi ho magar chhup nahi rahi meri jaaN
Jhalak rahi hai jo zer-e-qaba udaasi hai
DimaaGh mujh ko kahaaN kaainaati mas’aloN ka
Mera to sab se baRa mas’alaa udaasi hai
Falak hai sar pe udaasi ki tarah phaila hua
ZameeN nahi mere zer-e-paa udaasi hai
Ghazal ke bhes mein aayi hai aaj mahram-e-dard
Sukhan ki oRhe hue hai ridaa, udaasi hai
Ajeeb tarh ki haalat hai meri be-ahwaal
Ajeeb tarha ki be-maajraa udaasi hai
Wo kah rahe the k shair ghazab ka hai ‘Irfan’
Har aek she’r mein kya Gham hai kya udaasi hai

Advertisement