میں جرم خموشی کی صفائی نہیں دیتا
ظالم اسے کہیے جو دہائی نہیں دیتا


کہتا ہے کہ آواز یہیں چھوڑ کے جاؤ
میں ورنہ تمہیں اذن رہائی نہیں دیتا


چرکے بھی لگے جاتے ہیں دیوار بدن پر
اور دست ستم گر بھی دکھائی نہیں دیتا


آنکھیں بھی ہیں رستا بھی چراغوں کی ضیا بھی
سب کچھ ہے مگر کچھ بھی سجھائی نہیں دیتا


اب اپنی زمیں چاند کے مانند ہے انورؔ
بولیں تو کسی کو بھی سنائی نہیں دیتا 


[Ghazal Shayari] میں جرم خموشی کی صفائی نہیں دیتا

mohabbat mili tu neend bi apni ni rahi faraz 
gumnam zindgi thi tu kitna sakoon tha 

[urdu shayari] mohabbat mili tu neend bi apni ni rahi faraz


tu agar ishq mein barbad nahi ho skta 
ja tujhe koi sabak yaad nahi ho sakta 

[urdu poetry] tu agar ishq mein barbad nahi ho sakta


beqarari dekhi ha tu ne ab mera zabt b dekh
itna chup raho ge..... ka cheekh uhto gy tum

[urdu poetry] be qarari dakhi ha tu ne aab mera zabt b dakh

Kb bhulae jate hy dost juda ho kr bhe WASI
dil tot to jata hy.......rahta phr bhe seene me hy


Kb bhulae jate hy dost juda ho kr bhe

جاؤ قرار بے دلاں شام بخیر شب بخیر 
صحن ہوا دھواں دھواں شام بخیر شب بخیر

شام وصال ہے قریب صبح کمال ہے قریب 
پھر نہ رہیں گے سرگراں شام بخیر شب بخیر

وجد کرے گی زندگی جسم بہ جسم جاں بہ جاں 
جسم بہ جسم جاں بہ جاں شام بخیر شب بخیر

اے مرے شوق کی امنگ میرے شباب کی ترنگ 
تجھ پہ شفق کا سائباں شام بخیر شب بخیر

تو مری شاعری میں ہے رنگ طراز و گل فشاں 
تیری بہار بے خزاں شام بخیر شب بخیر

تیرا خیال خواب خواب خلوت جاں کی آب و تاب 
جسم جمیل و نوجواں شام بخیر شب بخیر

ہے مرا نام ارجمند تیرا حصار سر بلند 
بانو شہر جسم و جاں شام بخیر شب بخیر

دید سے جان دید تک دل سے رخ امید تک 
کوئی نہیں ہے درمیاں شام بخیر شب بخیر

ہو گئی دیر جاؤ تم مجھ کو گلے لگاؤ تم 
تو مری جاں ہے میری جاں شام بخیر شب بخیر

شام بخیر شب بخیر موج شمیم پیرہن 
تیری مہک رہے گی یاں شام بخیر شب بخیر 

جاؤ قرار بے دلاں شام بخیر شب بخیر